یادداشت

زیادہ دیکھے گئے موضوعات

ہم سے تعاون کریں

گریسی داعش میں شامل ہو گئی

 تحریر: طاہر یاسین طاہر 

بشکریہ: اسلام ٹائمز

انسان تو انسان وحشت کے سوداگروں نے اب جانوروں کی بھی ’’فرقہ بندی‘‘ شروع کر دی ہے۔ زیادہ دور جانے کے بجائے اگر صرف ۸۰ کی دھائی کو دیکھا جائے تو ہمارے معاشرے میں بھی انسانوں کو پکڑ پکڑ کر ان پر’’مجاہدانہ‘‘ ٹھپے لگائے جاتے تھے۔ اس وقت کے ’’جہاد‘‘ کو بھی امریکی امداد و حمایت حاصل تھی اور آج کے النصرہ اور داعشی جہاد کے پیچھے بھی امریکہ و اسرائیل اور ان کے اتحادیوں کی پلاننگ واضح ہے۔ القاعدہ کی تشکیل سے لے کر اس کے ’’بچے جننے تک‘‘ کے عمل کی جس طرح عالمی سامراجی طاقتوں نے نگہبانی کی، یہ سب بھی اپنی جگہ ایک پوری تاریخ ہے۔ ہمارے معاشرے میں کس طرح انتہا پسندی اور فرقہ واریت نے عروج پایا اس پر بھی تاریخ کے اوراق گواہ ہیں۔

کالم کاری کے لئے کئی ایک موضوعات آئے روز دستک دیتے ہیں۔ مقامی و ملکی اور بین الاقوامی سطح کے کئی ایک جھمیلے اخبار نویس کی راہ تک رہے ہوتے ہیں۔ بعض موضوعات مگر زیادہ توجہ کے طالب ہوتے ہیں۔ ہمارا المیہ یہ ہے کہ ہمارا میڈیا بین الاقوامی معاملات کو پاکستانی قارئین و ناظرین تک نہیں پہنچاتا۔ اخبارات اس حوالے سے زیادہ ذمہ دار ہیں۔ یمن کی صورتحال کو ہی دیکھ لیں۔ اندر کے صٖفحات پہ دو کالمی خبریں۔ امامِ کعبہ کی آمد پہ البتہ پہلے صفحے پہ تین تین کالم خبریں بھی چھپتی رہیں۔ وہ بھی مگر امام کعبہ کی خانہء خدا سے نسبت کے طفیل۔ ان کے دورے پہ غیر جانبدار تجزیہ کاروں نے اگرچہ انگشت نمائی بھی کی ہے۔ ہم مگر اس موضوع کو آج نہیں چھیڑیں گے۔ حیرت انسان کا قیمتی سرمایہ ہے بالکل ذہانت کی طرح۔ میں اپنے اس سرمائے کی بہت قدر کرتا ہوں۔ حیرت و استعجاب انسانی ذہن کو مسلسل سوچنے پہ لگائے رکھتا ہے۔ میری آج کی حیرت کا سبب گریسی نامی بھیڑ کی داعش میں شمولیت ہے۔ میں یمن کی صورتحال اور مشروط جنگ بندی کے حوالے سے کچھ لکھنا چاہ رہا تھا کہ بی بی سی اردو ڈاٹ کام کی ایک خبر نے میری ساری توجہ کھنچ لی۔ 

خبر کے مطابق”نیوزی لینڈ میں جانوروں کی فلاحی تنظیموں کے مطابق کسان عام طور پر اپنی بھیڑوں کی شناخت کے لئے ان پر کوئی نشانی لگاتے ہیں لیکن کسی بھیڑ کو اغوا کرنے کے بعد اس پر شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ کا رنگ کرنا ایک انوکھا واقعہ ہے۔ گریسی نامی ایک بھیڑ بدھ کی رات ڈیون پورٹ کے گرد و نواح سے غائب ہو کر آوارہ گردی کرتی ہوئی آک لینڈ کی سٹرکوں پر پہنچ گئی۔ گریسی کو کیٹ شین اور ان کے شوہر نے آک لینڈ کی سٹرکوں پر گھومتے دیکھا، جو ان کے لیے ایک حیران کن بات تھی۔ گریسی کے ایک جانب ۴۲۰ لکھا ہوا تھا جو چرس کا کوڈ ہے، جبکہ اس کی دوسری جانب کالے رنگ سے شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ کا مخفف ISIS لکھا ہوا تھا۔ نیوزی لینڈ میں جانوروں کی فلاح کی تنظیم سیو اینیملز فرام ایکسپلائٹیشن کے ایگزیکٹیو ڈائریکٹر ہانس کریک کا کہنا ہے کہ ایسی شرارت بے وقوفی ہوتی ہے اور اس سے جانور پر غیر ضروری ذہنی دباؤ آسکتا ہے۔ انھوں نے کہا کہ اگرچہ یہ جانوروں پر بے رحمی کا بڑا مظاہرہ نہیں ہے لیکن پھر بھی بیوقوفانہ کام ہے اور جانوروں کے لئے سخت تکلیف دہ ہے۔  ہانس کریک کے مطابق بھیڑیں قدرتی طور پر نروس جانور ہوتی ہیں اور اس حرکت سے ان پر غیر ضروری دباؤ آسکتا ہے۔ گمشدہ اور پالتو جانوروں کو ڈھونڈنے کا کام کرنے والے نارتھ شور پیٹز نامی فیس بک گروپ کا کہنا ہے کہ گریسی کو قریبی پناہ گاہ پہنچا دیا گیا، جس کے بعد اس کے مالکان اسے آکر واپس لے گئے۔‘‘

خبر میں مگر یہ نہیں بتایا گیا کہ گریسی بھیڑ کے مالکان بھیڑ پر سے لکھا ہوا ISIS مٹا دیں گے یا نہیں، کیونکہ جانوروں کی تنظیم والے یہ کہہ رہے ہیں کہ ایسی حرکات سے جانوروں پر غیر ضروری دباؤ آجاتا ہے۔ یعنی شدت پسندی اور دہشت گردی ایک ایسی وبا اور بیماری ہے جس سے جانور بھی پناہ مانگتے ہیں۔ پس یہ بھی ثابت ہوتا ہے کہ دہشت گرد اور شدت پسند جانوروں سے بھی بدتر ہیں کہ جو اپنے جیسے انسانوں کو ذبح کرنے میں دباؤ کے بجائے’’لذت‘‘ محسوس کرتے ہیں۔ اس خبر کو ایک اور طرح دیکھا جائے تو یہ بات بھی سامنے آتی ہے کہ داعش نیوزی لینڈ تک اپنے حمایتی رکھتی ہے، جو ’’جہاد النکاح‘‘ میں شمولیت کو بے قرار ہیں۔ سوال مگر یہ ہے کہ نیوزی لینڈ کی حکومت نے اس سارے معاملے کی تحقیقات کرنے کے بجائے گریسی کو مالکان کے حوالے کیوں کر دیا؟ کیا اس سے ISIS کے نیوزی لینڈ میں چھپے سپورٹروں کو شہہ نہیں ملے گی؟ اور کل کو وہ انسانوں کو بھی اغوا کرکے ان پر ISIS کی مہریں لگا کر چھپ جایا کریں گے، کیونکہ دنیا کی ساری دہشت گرد تنظیموں کا یک مشترکہ کاروبار اغوا بھی ہے۔

اس بات کو بھی نظر انداز نہیں کیا جاسکتا کہ ISIS کے حمایتی ایک ’’چرسی‘‘ بھیڑ کو ISIS کی نمائندہ کیوں بنا رہے ہیں؟ کیا ISIS والے یہ پیغام دیانا چاہتے ہیں کہ وہ عراق و شام کی حدوں سے نکل کر آسٹریلیا و نیوزی لینڈ کے دور دراز جزیروں تک اپنا نیٹ ورک قائم کرچکے ہیں؟ بادی النظر میں یہی لگتا ہے۔ کیونکہ یمن سعودی عرب جنگ میں ISIS کی کارروائیوں کو میڈیا میں وہ کوریج نہیں ملی، جس کی انھیں توقع تھی تو انھوں نے نیا طریقہ دریافت کیا۔ بعید نہیں کہ کل کلاں کسی صحرائی ملک کے اونٹوں پر بھی ISIS کا سپرے کر دیا جائے۔ دنیا ایک ہولناک جنگ کے دھانے پر ہے۔ اس میں داعش، القاعدہ، النصرہ، افغانی و پاکستانی طالبان، اردن و مصر کی شدت پسند تنظیمیں اپنی ایک نام نہاد خلافت پر مبنی ریاست کا خواب دیکھ رہی ہیں، جبکہ امریکہ و دیگر عالمی طاقتیں ان قوتوں کو مہمیز بھی کر رہی ہیں اور ان کی آڑ میں مشرقِ وسطٰی کو بکھیرنے کا خواب بھی شرمندہء تعبیر کرنا چاہتی ہیں۔ ہم بے شک فیصلہ کن مرحلے میں ہیں۔

مشرقِ وسطٰی سے اٹھنے والے شعلے آگ میں بدلتے نظر آرہے ہیں۔ اپنے خاص جغرافیائی لحاظ اور معاشرتی رویے کی بنا پر مشرقِ وسطٰی میں جاری ’’جہادی‘‘ و غیر جہادی کھیل سے پاکستان البتہ لاتعلق نہیں رہ سکتا، کیونکہ اس کے اثرات ہمارے معاشرے پر ضرور پڑ رہے ہیں۔ کیا ہمارے جوان شام میں القاعدہ و النصرہ کی مدد کو نہیں پہنچے؟ کیا ہم یمن کی آگ میں کودنے کو بے قرار نہیں؟ کیا سعودی عرب اتحاد میں شمولیت کے لئے ہمارے ہاں جمعۃ المبارک کو ریلیاں اور عام دنوں میں کانفرنسز نہیں ہو رہی ہیں؟ یہ سب وہ حقائق ہیں جن سے کسی بھی طرح آنکھیں نہیں پھیری جاسکتیں۔ ہمیں تسلیم کرنا چاہیے کہ ہم نے انتہا پسندی کو جہادی لبادے میں درآمد کیا ہے۔ نیوزی لینڈ جیسے ملک، جسے دنیا کے امن پسند ملکوں میں سے جانا جاتا ہے، وہاں شدت پسندوں کی جانب سے بھیڑ کو ’’اغوا‘‘ کرکے اس پر ISIS کا سپرے کرنا کوئی معمولی واقعہ نہیں ہے۔ اس کے پیچھے پوری دنیا کے امن پسندوں کے لئے ایک پیغام بھی ہے۔ نیوزی لینڈ کی حکومت کو ہرحال میں ’’اغوا کاروں اور انکے مقاصد‘‘ تک پہنچنا چاہیے، اگر ایسا نہ ہوا تو آئندہ دنوں میں آک لینڈ سے تاجر اور سیاستدان بھی اغوا ہوا کریں گے، اور نیوزی لینڈ کی حکومت ’’گریسی‘‘ کے ذریعے اغواکاروں کو بھتہ بھی دیا کرے گی۔

 

 

 

sharethis گریسی داعش میں شامل ہو گئی

جواب ارسال کریں

آپ کا ای میل (نشر نہیں کیاجاٗے گا).
لازمی پر کرنے والے خانوں میں * کی علامت لگا دی گئی ہے.

*


نُه − 7 =

رابطہ کیجیے | RSS |نقشہ سائٹ

اس سائٹ اسلام ۱۴ کے جملہ حقوق محفوظ ہیں،حوالے کے ہمراہ استفادہ بلامانع ہے