یادداشت

زیادہ دیکھے گئے موضوعات

ہم سے تعاون کریں

داعش کے مظالم اور مقدسات اسلامی کے تحفظ کے حوالے سے پریس کالونی میں احتجاج ریلی

سبط محمد // سرینگر کشمیر

اسلامی ملک عراق میں موجود ISIL  یا داعش دہشت گردوں کے مظالم اور تشدد کے خلاف پریس کالونی سرینگر میں ایک احتجاجی ریلی کا اہتمام ہوا، احتجاجی ریلی میں شامل مظاہرین کا کہنا تھا کہ عراق میں فعال داعش دہشت گردوں کا اسلام کے کسی فرقے سے کوئی تعلق نہیں ہے، یہ صہیونیت، استعمار اور استکبار کی سازش ہے کہ داعش دہشت گرد گروپ کو مسلمانوں کے کسی ایک فرقے سے جوڑ کر مسلمانوں میں انتشار پھیلایا جائے، مظاہرین میں شامل شیعہ سنی نوجوانوں نے اپنے ہاتھوں میں پلے کارڈز اٹھا رکھے تھے جن پر ’’دہشت گردی اسلام نہیں، شیعہ سنی بھائی بھائی داعش نے آگ لگائی، عراقی مقدسات کی حفاظت اہم فریضہ، ISIL  مسلمان نہیں بلکہ استعمار کے ایجنٹ، دہشت گردی امریکی سازش، ہم مسلمان دہشت گردی کے خلاف متحد ہیں، داعش مسلمان نہیں انسان نہیں‘‘ جیسے نعرے درج تھے۔

آبی گذر سرینگر میں نماز جمعہ کے بعد کثیر تعداد میں مسلم نوجوانوں نے مقامات مقدسہ کی حفاظت اور عالمی دہشت گردی مخالف احتجاجی ریلی کا اہتمام کیا جس میں مظاہرین نے کہا کہ عراق میں جاری حالیہ بدامنی میں تکفیری اور صیہونی عناصر ملوث  ہیں، مسلمان ممالک کو چاہئیے کہ وہ آپسی اختلافات کو بھلا کر ان تکفیری اور صہیونی قوتوں کا مقابلہ کریں۔ تحریک تحفظ اسلام و مقدسات اسلامی کے بینر تلے ریلی میں مظاہرین کا کہنا تھا کہ عراق میں شیعہ اور سنی کا کوئی مسئلہ نہیں ہے، عراقی عوام آپس میں متحد ہو کر تکفیری عناصر سے برسر پیکار ہے، انہوں نے کہا کہ عالمی میڈیا اور استعمار اس صورت حال کو شیعہ سنی مسئلہ ظاہر کر رہا ہے جو کے بالکل غلط ہے اور عراق میں اہل بیت علیھم السلام اور صحابہ کرام رضی اللہ عنھم کے مزارات کی بے حرمتی کو کسی صورت قبول نہیں کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ تکفیری عناصر دنیا بھر میں اپنا نفوذ بڑھا رہے ہیں ایسے میں مسلمانان عالم کی ذمہ داری ہے کہ وہ اپنے آپ کو مضبوط کریں اور ان خارجی اور تکفیری عناصر کا ڈٹ کر مقابلہ کریں۔ ہم نوجوان عراق میں اہل بیت علیھم السلام اور صحابہ کرام رضی اللہ عنھم کے مزارات کے دفاع کے لئے تیار ہیں۔

مظاہرین کا کہنا تھا کہ عراق کے اہل سنت عالم دین مفتی امینی نے آیت اللہ سیستانی کے جہاد کفائی کے فتوی کی حمایت کر کے ملت اسلامیہ کے اتحاد کے لئے اسلامی بیداری کی نئی بنیاد ڈال دی ہے، انہوں نے کہا کہ انشاءاللہ شام کی طرح دہشت گردوں کو عراق میں بھی بری طرح شکست ہوگی۔ نجف و کربلا، اہلبیت اطہار، اصحاب رسول (ص) اور علماء و مشائخ کے مزارات و آثار کی حفاظت ہمارا مذہبی فریضہ ہے۔

پریس کالونی سرینگر میں   تحریک تحفظ اسلام و مقدسات اسلامی کے بینر تلے منعقد ہ احتجاجی ریلی میں مظاہرین کا کہنا تھا کہ عراق عقیدتوں کی سرزمین ہے جس سے اسلام کے ماننے والے مختلف فرقوں کی روحانی اور جذباتی وابستگیاں قائم ہیں، جن کے لئے ہر مسلمان تن من اور دھن قربان کرنے کے لئے ہمہ وقت تیار ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ دنیا کے مختلف خطوں میں اسلام کی من مانی تشریح کرنے والے اور مسلمانوں کی واضح اکثریت پر کفر و شرک کے فتوے لگانے والے انتہا پسند مختلف ناموں کے بعد اب داعش کے نام پر عراق کے مختلف شہروں میں نہتے مسلمانوں، علماء اور مشائخ کا بہیمانہ قتل عام کر رہے ہیں جبکہ وہ صدیوں سے قائم مساجد، مدارس اور ان سے ملحق کتب خانوں پر قبضہ کرنے، صحابہ و اہلبیت اور مشائخ کے مزارات کو مسمار کرنے کے مذموم ارادوں کا اظہار کر رہے ہیں۔ مظاہرین نے اس دوران عالمی دہشت گردی، امریکہ اور اسرائیل مخالف زبردست نعرے بازی کی اور مسلمانوں کے آپسی اتحاد پر زور دیا۔

مظاہرین نے جمعیت علماء پاکستان کراچی کے صدر علامہ قاضی احمد نورانی صدیقی کے بیان کو بھی سراہا جس میں انہوں نے کہا تھا کہ داعش (ISIL) ایک دہشت گرد اور تکفیری گروہ ہے، تکفیری دہشت گردوں کو سنی مسلمان کہنا اسلام کی توہین کے مترادف ہے، نورانی صدیقی نے مزید کہا تھا کہ حضرت علی (ع)، حضرت امام حسین (ع)، حضرت عباس (ع)، امام ابوحنیفہ، غوث الاعظم حضرت شیخ عبدالقادر جیلانی، حضرت جنید بغدادی اور حضرت سری سقطی کے مزارات سمیت عراق میں موجود تمام مقامات مقدسہ کی حفاظت کے لئے غیور مسلمان مشترکہ حکمت عملی اختیار کریں۔

 

 

 

sharethis داعش کے مظالم اور مقدسات اسلامی کے تحفظ  کے حوالے سے  پریس کالونی  میں احتجاج ریلی

جواب ارسال کریں

آپ کا ای میل (نشر نہیں کیاجاٗے گا).
لازمی پر کرنے والے خانوں میں * کی علامت لگا دی گئی ہے.

*


4 + = سیزده

رابطہ کیجیے | RSS |نقشہ سائٹ

اس سائٹ اسلام ۱۴ کے جملہ حقوق محفوظ ہیں،حوالے کے ہمراہ استفادہ بلامانع ہے